×

اچانک وہاں سے ایک وزیر کا گزر ہوا

ایک مرتبہ کا ذکر ہے کہ حضرت ابراہیم ادھم رحمتہ اللہ علیہ دریا کے کنارے پر بیٹھے اپنی گدڑی سی رہے تھے اچانک وہان سے ایک وزیر کا گزر ہوا اس نے جو حضرت ابراہیم ادھم کو اس حالت میں دیکھا تو بڑی حیرت کا اظہار کیا اور کہنے لگا کہ کس قدر
عظیم سلطنت کے مالک ہیں اور فقیری کو اختیار کر رکھا ہے بادشاہ ہو کر فقیروں کی طرح گدڑی سی رہے ہیں جبکہ ادھر ان کے نہ ہونے سے سلطنت برباد ہوئی جا رہی ہے۔

حضرت ابراہیم ادھم رحمتہ اللہ علیہ نے کشف کے ذریعے سے اس کے دل کو بات معلوم کر لی۔ اور اس کو اپنے قریب بلایا۔ وہ وزیر آپ کے قریب آیا تو آپ نے اس سے فرمایا تو نے اپنی سمجھ کے مطابق بات کی ہے۔

اس کے بعد آپ نے اپنی سوئی دریا میں بھینک دی اور پھر بلند آواز سے پکارا کہ میری سوئی مجھے دو۔ اچانک دریا کے اندر سے ہزاروں مچھلیاں اپنے اپنے منہ میں سونیب کی سوئی دبائے ہوئے پانی سے باہر نکلیں۔

حضرت ابراہیم ادھم رحمتہ اللہ علیہ نے پھر آواز دی ۔ اے اللہ ! مجھے صرف میری سوئی چاہئے چنانچہ اسی وقت ایک دوسری مچھلی برآمد ہوئی جس کے منہ میں حضرت ابراہیم ادھم رحمتہ اللہ علیہ کی سوئی تھی آپ نے سوئی اس مچھلی سے لے لی۔

اس کے بعد آپ نے اس وزیر کی طرف توجہ کرتے ہوئے فرمایا کہ یہ بادشاہی اچھی ہے یا وہ حقیر سلطنت کی بادشاہی۔ پھر خود ہی فرمایا؛ یقیناًیہ بادشاہی حقیقی بادشاہی ہے اور سب سے اچھی ہے۔

یہ سن کر اور دیکھ کر وزیر نے معذرت کی اور اپنی راہ پر چل دیا

 

Pلیٹیسٹ نیوز پاکستان

اپنا تبصرہ بھیجیں