×

پالیسیاں کو ن بناتاہے؟ فوج اور حکومت کے معاملات پر افواہیں ،موجودہ حالات میں وزیراعظم کے اعلان نے تہلکہ مچادیا۔۔۔ اپوزیشن کے منہ بھی کھلے کے کھلے رہگئے

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) وزیراعظم عمران خان کے بیان نے اپوزیشن کے امنگوں پرپانی پھیر دیا ہے۔۔ وزیراعظم نے کہا ہے کہ حکومت اور فوج میں مکمل ہم آہنگی ہے، پالیسیوں کو مسلح افواج کی حمایت حاصل ہے، مل کر کام کر رہے ہیں، آگے بڑھنے کیلئے کرپشن کا خاتمہ ضروری ہے، راتوں رات معیشت کو ٹھیک

نہیں کیا جاسکتا، ملک کو درست سمت پر گامزن کر دیا۔

 وزیراعظم عمران خان نے غیر ملکی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت سنبھالی تو معاشی محاذ پر متعدد چیلنجز درپیش تھے، حکومت نے ملک کو درست سمت پر گامزن کر دیا، راتوں رات معیشت کو درست نہیں کیا جاسکتا، ہم نہیں چاہتے معیشت کا انحصار قرضوں پر ہو، کورونا کے حوالے سے پاکستان نے بہترین فیصلہ کیا، ہم نے آنکھیں بند کر کے مکمل لاک ڈاؤن کی پالیسی اختیار نہیں کی، آگے بڑھنے کیلئے کرپشن کا خاتمہ بہت ضروری ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا پاکستان میں میڈیا پر کوئی قدغن نہیں، حکومت اظہار رائے کی آزادی پر یقین رکھتی ہے، میرے دور حکومت میں سب سے زیادہ تنقید ہوئی، ہماری حکومت نے خندہ پیشانی سے تنقید کا سامنا کیا۔

انہوں نے کہا فوج کے ساتھ بہترین تعلقات ہیں، مل کر کام کر رہے ہیں، افغانستان کی 19 سالہ جنگ میں بہت خون ریزی ہوئی، میں کہتا رہا افغان مسئلے کا حل مذاکرات ہیں، بعض عناصر افغان امن عمل کو متاثر کرنا چاہتے ہیں۔

وزیراعظم نے کہا اقتدار میں آیا تو بھارت کی طرف امن کیلئے ہاتھ بڑھایا، بدقسمتی سے بھارتی وزیراعظم نے امن کی پیشکش کو قبول نہیں کیا، بھارت میں انتہا پسندوں کی حکومت ہے، آر ایس ایس ایک انتہا پسند تنظیم ہے، بھارتی حکومت نازیوں سے متاثر ہے، بھارت کو کسی بھی پاکستانی سے بہتر جانتا ہوں، 70 سال سے کشمیر بھارت اور پاکستان میں متنازعہ ہے، مسئلہ کشمیر کا حل فوجی طاقت نہیں، پاکستان کیخلاف بھارت کچھ کرے تو ہم خاموش نہیں رہ سکتے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں