×

ایک مقصد کے لےایک سے زیا دہ وظا ئف کر نے والو ں کے سا تھ کیا ہو تا ہے

آج آپ کے بارے میں جو کچھ بتایا جارہا ہے وہ ایک بہت ہی ثابت شدہ عمل ہے۔ اس عمل کے بارے میں سب سے بڑی بات یہ ہے کہ یہ حدیث شریف سے ثابت ہے۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی یہ مشق پیش کی۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ، جو دونوں جہانوں کے حکمران ہیں ، نے فرمایا: تو میرے احباب بھی میرے حالات سے فائدہ اٹھاتے ہیں۔ اللہ تعالٰی نے مجھے اتنا کچھ دیا ہے کہ جو شخص اعمال کرتا ہے وہ خود دولت سے فائدہ اٹھاتا ہے اور لوگوں کو بھی دیتا ہے۔ دیتا ہے۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا ہے کہ وہ اسے دوسروں میں بانٹ دیتا ہے ، لیکن دوسروں کی مدد کرکے ، اللہ اسے زیادہ دولت سے نوازتا ہے۔ سامعین: اس عمل سے فائدہ اٹھائیں۔ اب تک ، دسیوں ہزاروں افراد اس عمل سے مستفید ہوئے ہیں۔ اس عمل پر یقین کریں۔ یہ کافی ہے کہ یہ عمل حدیث شریف سے ثابت ہے۔ یہ وظیفہ بہت تجربہ کار ہے۔ اگر آپ اس عمل کو اپنی زندگی کا ایک حصہ بناتے ہیں تو ، آپ کو بہت سارے انعامات کے ساتھ ساتھ دولت اور نعمتیں ملیں گی۔ میں اس عمل کو آپ کی خدمت میں پیش کرنا چاہتا ہوں۔ شیئرنگ کیئرنگ ہے!

اپنا تبصرہ بھیجیں