×

اے جبریل تیری رفتار کتنی ہے ؟ جب آقائے دو جہاں ﷺ نے روح الامین سے یہ سوال کیا تو کیا جواب ملا ؟

نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے جبرائیل علیہ السلام سے پوچھا: “اے جبرائیل علیہ السلام! کیا آپ نے کبھی آسمان سے اترتے ہوئے مشکلات کا سامنا کیا ہے؟ جبریل نے جواب دیا ، “ہاں!” یہ چار موقعوں پر ہوا: 1- جب حضرت ابراہیم علیہ السلام کو آگ میں پھینک دیا گیا۔ میں عرش کے نیچے تھا۔ اللہ تبارک وتعالی نے فرمایا: ”میرے بندے کے پاس پہنچ جاؤ۔ میں فورا؟ نیچے آیا اور اس سے پوچھا: کیا میرے لئے کوئی لائق خدمت ہے؟ “نہیں ،” اس نے کہا۔ 2- جب حضرت ابراہیم علیہ السلام نے حضرت اسماعیل علیہ السلام کی گردن پر چھری رکھی۔ میں عرش کے نیچے تھا۔ اللہ رب العزت نے فرمایا: ”میرے بندے کا نوٹس لے۔ میں پلک جھپکتے ہوئے نیچے آیا اور چاقو مڑا۔ 3- جب کفار نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو زخمی کیا۔ احد کی جنگ کے دن مبارک دانتوں کو شہید کردیا گیا ، تب اللہ رب العزت نے مجھ سے فرمایا: “میرے پیارے نبی کریم of کے مبارک خون کو روکیں اگر زمین پر ایک قطرہ بھی گر جائے تو وہ نہیں بڑھ سکے گا۔ پودے اور درخت۔ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا مبارک خون اپنے ہاتھ پر اٹھایا اور پھر اسے ہوا میں پھینک دیا۔ – جب حضرت یوسف علیہ السلام کو کنویں میں پھینک دیا گیا تو اللہ تعالٰی نے فرمایا: ”میرے بندے کے پاس پہنچ جاؤ۔ میں نے اس (کعبہ) کو کنویں کی تہہ تک پہنچنے سے پہلے لے لیا۔ میں نے وہاں سے ایک پتھر نکالا اور اس (ص) کو بٹھایا۔ شیئرنگ کیئرنگ ہے!

اپنا تبصرہ بھیجیں